سینئر صحافی عارف نظامی نے یہ دعوی کیا ہے کہ قطری حکومت سے  ڈیل 70 سے 80 تقریبا مکمل ہو چکی ہے ہے اور ہے 12 سے 15 ارب ڈالر دینے کا اشارہ دیا ہے ہے جس میں سے پاکستان کو 3 ارب ڈالر پہلے دیئے جائیں گے اور باقی مزید 10 سے 12 ارب ڈالر دیئے جانے کا بھی امکان ہے

 ہے بہت تیزی سے یہ افواہ گردش میں تھیں تھی کہ شاید کوئی نہیں ہے شاید میاں صاحب خفیہ طور پر حل کرنا چاہتے ہیں لیکن بظاہر اس کا کوئی شواہد نہیں ملا ضلع لیہ دنوں میں قطری حکومت شہزادہ جب انسان میں آئے ہیں تو یہ بات زور پکڑ چکی ہے کہ پاکستانی حکومت جن میں خاص کر عمران خان کو اس بات پر راضی ہوجائیں گے کہ میاں صاحب اور ان کی   

بیٹی مریم نواز لندن چلے جائیںگی 

  جبکہ میاں محمد شہباز شریف اور ان کے بیٹے پاکستان میں ہی رہیں گے یہی وجہ ہے کہ ہم نے دیکھا ہے میاں شہباز شریف کے لہجے میں کچھ نرمی دکھائی دی ہے جبکہ مریم بی بی ابھی تک وہی لہجہ اپنائے ہوئے ہیں جو کہ ان کا الیکشن سے پہلے تھا اور عمران خان کے حوالے سے یہ بات بھی کہی جا رہی ہے کہ وہ  اس کھیل پر زیادہ خوش نہیں ہیں اور ایک سخت موقف اپنائے ہوئے ہیں.

 ہیں لیکن یہ بات بھی سچ ہے کہ عمران خان ان بہت سارے موقف سےیا   وہ بہت سارے نقاط سے پیچھے ہٹ چکے ہیں ہیں جو انہوں نے الیکشن سے پہلے  کہہ رہے تھے لہٰذا اس بات کا قوی امکان ہے کہ نواز شریف کو جلد ہی خوشخبری ملنے والی ہے . اس بات کو خارج از امکان نہیں کہا جا سکتا کہ عمران خان جلد ہی یہ ڈیل  قبول کر لیں گے اور ملک میں معاشی بدحالی ہے اس کو کو قابو میں لانے کے لیے وہ ڈیل کر سکتے ہیں لیکن آج ہم نے یہ بھی دیکھا کہ حکومت کی طرف سے بڑا واضح طور پر پیغام دیا گیا کہ کہ زرداری کے دور میں جو قرضے لیے گئے تھے ان کا حساب ہونا چاہیے اور یہ کہاں کہاں پیسہ خرچ کیا گیا اس کا حساب ہونا چاہیے

.

ساتھ ہی ساتھ یہ بات بھی بہت اہم ہے کہ میاں محمد نواز  ہے شریف کو عمران خان ذرا بھی ڈیل نہیں دینا چاہتے تازہ عدنان خان سمجھتے ہیں کہ اس ملک کا جو حالیہ بحران ہیں اس کا اہم کردار میاں محمد نواز شریف ہے